April 18, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/redpanal.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
British Prime Minister Rishi Sunak speaks during Prime Minister's Questions, at the House of Commons in London, Britain, on February 21, 2024. (Reuters)

برطانوی وزیرِ اعظم رشی سونک نے اتوار کے روز کہا کہ غزہ تنازعہ پر کچھ قانون سازوں کو ان کے خیالات کے حوالے سے درپیش خطرات کی وجہ سے دار العوام کے اسپیکر نے طریقۂ کار کو توڑنے کا فیصلہ کیا جس سے ایک خطرناک اشارہ ملتا ہے کہ دھمکیاں کام کرتی ہیں۔

پارلیمنٹ بدھ کی رات انتشار کا شکار ہو گئی کیونکہ غزہ میں جنگ بندی کا مطالبہ کرنے اور درست زبان استعمال کرنے کے بارے میں ووٹنگ پر کشیدگی ہو گئی تھی۔

ایوانِ زیریں کے سپیکر لنڈسے ہوئل نے کہا کہ انہوں نے ووٹ کے لیے معمول کے پارلیمانی طریقۂ کار کی خلاف ورزی کی اور اس کی وجہ انہوں نے قانون سازوں کے خلاف “بالکل خوفناک” دھمکیوں کو قرار دیا۔

سونک نے ایکس پر ایک پوسٹ میں کہا، “اس ہفتے پارلیمنٹ میں ایک خطرناک اشارہ بھیجا گیا تھا کہ دھمکیاں کام کرتی ہیں۔”

“یہ ہمارے معاشرے اور ہماری سیاست کے لیے زہرناک ہے اور ان آزادیوں اور اقدار کی توہین ہے جو ہمیں یہاں برطانیہ میں عزیز ہیں۔ ہماری جمہوریت تشدد اور دھمکی کے خطرے کے سامنے نہیں جھک سکتی اور نہ ہی ایک دوسرے سے نفرت کرنے والے منقسم کیمپوں کا حصہ بن سکتی ہے اور نہ ہی ایسا ہونا چاہیے۔”

ہفتے کے روز سونک کے کنزرویٹو ارکان نے اپنے ایک قانون ساز اور پارٹی کے سابق نائب چیئرمین لی اینڈرسن کو معطل کر دیا جب انہوں نے یہ کہہ کر معافی مانگنے سے انکار کر دیا کہ لندن کے میئر عسکریت پسندوں کے کنٹرول میں تھے۔

بدھ کے روز سینکڑوں فلسطینی حامی مظاہرین پارلیمنٹ کے باہر جمع ہو گئے تھے جنہوں نے عمارت کے الزبتھ ٹاور پر پیغامات درج کر دیئے بشمول ایک نعرہ “دریا سے سمندر تک، فلسطین آزاد ہو گا”۔ اس نعرے کو ناقدین اسرائیل کے خاتمے کے مطالبے سے تعبیر کرتے ہیں۔

سونک نے کہا کہ برطانیہ نے واقعات کا ایک ابھرتا ہوا نمونہ دیکھا ہے جسے “برداشت نہیں کیا جانا چاہئے”۔

انہوں نے کہا، “دہشت گردی کو فروغ دینے اور اس کی تعریف کرنے کے لیے انتہا پسندوں کی طرف سے جائز مظاہروں کو ہائی جیک کیا گیا، منتخب نمائندوں کو زبانی دھمکیاں دی گئیں اور جسمانی طور پر پرتشدد طریقے سے نشانہ بنایا گیا اور ہماری اپنی پارلیمنٹ کی عمارت پر یہود مخالف استعارات چمکائے گئے۔”

“سات اکتوبر کو حماس کے دہشت گردانہ حملوں کے بعد سے تعصب اور سام دشمنی کا دھماکہ ناقابلِ قبول بھی اتنا ہی ہے جتنا کہ وہ غیر برطانوی ہے۔”

قانون ساز مائیک فریر جو یہودیوں کی بڑی آبادی والے لندن کے علاقے کی نمائندگی کرتے ہیں، انہوں نے اس ماہ کے شروع میں نے کہا تھا کہ وہ دھمکیاں ملنے اور اپنے دفتر پر آتش زنی کے حملے کے بعد اگلے انتخابات میں اپنی پارلیمانی نشست چھوڑ دیں گے۔

سنڈے ٹائمز اور سنڈے ٹیلی گراف دونوں اخبارات نے رپورٹ کیا کہ پارلیمنٹ کے متعدد اراکین کو خطرہ لاحق ہونے کا اندازہ لگانے کے بعد ٹیکس دہندگان کی مالی اعانت سے چلنے والے محافظ دیے گئے ہیں۔

قدامت پسند قانون ساز ڈیوڈ ایمس کو 2021 میں ایک ایسے شخص نے قتل کر دیا تھا جس نے کہا تھا کہ وہ شام پر فضائی حملوں کے لیے قانون ساز کی حمایت کا بدلہ لے رہا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *